لاپتہ افراد کے لواحقین کے احتجاج جاری ،آج ایاز قمبرانی کے خاندان نے شرکت کی

کوئٹہ پریس کلب کے سامنے لاپتہ بلوچ اسیروں کے بازیابی کے لئے کام کرنے والی تنظیم وائس فار بلوچ مسنگ پرسنزکے احتجاجی کیمپ کو 3493 دن مکمل ہوگئے ۔اس احتجاجی کیمپ میں لاپتہ بلوچ طالب علم رہنما شبیر بلوچ کی بہن سیما بلوچ اور اس کی اہلیہ زرینہ بلوچ گزشتہ سال کے اواخر میں شامل ہوئے تھے وہ بھی کیمپ کا باقاعدہ حصہ ہے ۔

آج احتجاج میں شبیر بلوچ کی بہن سیما بلوچ ،اہلیہ زرینہ بلوچ کے علاوہ لاپتہ بلوچ طالب علم نصیر بلوچ کے اہلیہ زبیدہ بلوچ اورکمسن بیٹی ماہ رنگ اور سیاسی و سماجی کارکن حوران بلوچ اورلاپتہ عرفان بلوچ کی بہن اور والدہ اور لاپتہ ایاز قمبرانی کے والدہ اور اس کا بھائی آج احتجاج میں شریک ہوگئے۔

واضح رہے کہ ایاز قمبرانی کو 14جولائی 2015پاکستانی فوج نے کوئٹہ قمبرانی روڈ سے حراست میں لے کر لاپتہ کیا جو تاحال لاپتہ ہیں لواحقین نے بات کرتے ہوئے کہا کہ ہم انسانی حقوق اور عالمی اداروں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ ہمارے پیاروں کی بازیابی کے کردار ادا کریں اگر ہمارے پیاروں پر کوئی الزام ہے تو انہیں عدالتوں میں پیش کریں اگر وہ گناہ گار ثابت ہوئے جو سزا دیں گے ہمیں قبول ہے مگر اس لوگوں کو حراست میں لے دس دس سالوں تک لاپتہ کرکے ہمیں بے موت نہ ماریں ۔